امریکی حکومت کا صدر ٹرمپ کے بالوں کا خیال رکھنے کیلئے انوکھا فیصلہ

امریکی حکومت نے صدر ٹرمپ کے بالوں کا خیال رکھنے کے لیے انوکھا فیصلہ کیا ہے جس میں نہانے کے لیے پانی کا استعمال بڑھانے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔
برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق 1992 کے امریکی قوانین کے مطابق امریکا میں شاور ہیڈ میں ایک منٹ کے دوران 9اعشاریہ5 لیٹر سے زائد پانی بہانے کی اجازت نہیں ہے لیکن امریکی انتظامیہ نے صدر ٹرمپ کو درپیش مسئلے کی وجہ سے اب اس پالیسی میں تبدیلی کی تجویز دی ہے۔
برطانوی میڈیا کے مطابق ٹرمپ انتطامیہ چاہتی ہے کہ پانی کے استعمال کی حدود کو بڑھایا جائے اور 9اعشاریہ5 لیٹر فی منٹ پانی کا استعمال پورے شاور ہیڈ کے بجائے اس کے ہر نوزل پر کیا جائے یعنی ایک منٹ میں شاور ہیڈ سے 9اعشاریہ5 لیٹر پانی بہانے کے بجائے اس کے ہر نوزل سے اتنا پانی استعمال کرنے کی اجازت دی جائے۔البتہ صارفین اور پانی کے تحفظ کے لیے کام کرنے والے گروپوں نے امریکی انتظامیہ کی اس تجویز کو غیر ضروری قرار دیا ہے۔
برطانوی میڈیا کے مطابق گزشتہ ماہ صدر ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس میں اس حوالے سے شکایت کی تھی جس کے بعد امریکی محکمہ توانائی نے شاور رولز یا نہانے سے متعلق پالیسی میں تبدیلی کی تجویز دی ہے۔
امریکی صدر ٹرمپ نے کہا تھا کہ جب آپ نہائیں تو پانی نہیں آتا، جب آپ ہاتھ دھونا چاہتے ہیں تو پانی نہیں آتا، تو ایسے میں آپ کیا کرتے ہیں؟ کیا آپ صرف وہاں دیر تک کھڑے ہوتے ہیں یا پھر دیر تک نہاتے ہیں؟
صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ مجھے اور لوگوں کا نہیں پتا لیکن میرے بالوں کی وجہ سے ایسا ہوتا ہے مگر اسے درست کرنا ہے۔
امریکی انتظامیہ کی تجویز پر توانائی کے تحفظ کے لیے کام کرنے والے گروپ اپلائنس اسٹینڈرڈ اویئرنس پروجیکٹ کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر اینڈریو ڈی لاسکی کا کہا تھا کہ یہ ‘احمقامہ’ فیصلہ ہے۔
انہوں نے کہا کہ اگر صدر ٹرمپ کو اچھے طریقے سے نہانے کی ضرورت ہے تو ہم ان کو اس سلسلے میں اچھی کنزیومر ویب سائٹس بتاسکتے ہیں جو انہیں اچھے شاور ہیڈز فراہم کرنے میں مدد دیں گی۔

100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں