`دودھ کی قیمت میں غیر قانونی اضافہ`ڈیری فارمرز،ریٹیلرز کو یومیہ 9 کڑوڑ دس لاکھ روپے کا منافع

ڈیری اینڈ کیٹل فارمرز ایسوسی ایشن نے ایک مرتبہ پھر اپنی من مانی کرتے ہوئے دودھ کی قیمت میں دس روپے کا اضافہ کردیا جس کے بعد فی لیٹر دودھ کی قیمت 120 روپے ہوگئی، ڈیری فارمرز کی جانب سے دودھ کی قیمت میں اضافے کا بوجھ براہ راست کراچی کے شہریوں پر پڑھ رہا ہے سرکاری نرخ کے مطابق دودھ کی فی لیٹر قیمت 94 روپے مقرر ہے لیکن مختلف اوقات میں ڈیری فارمرز نے اپنی من مانی کرتے ہوئے دودھ کی قیمت میں 26 روپے تک کا اضافہ کردیا لیکن ہر بار کی طرح اس مرتبہ بھی متعلقہ ادارے مجرمانہ خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں.
خبر بااثر کے سروے کے مطابق کراچی میں یومیہ دودھ کی کھپت 45 لاکھ لیٹر ہے جس میں سے 35 لاکھ لیٹر ڈیری جبکہ 10 لاکھ لیٹر مختلف کمپنیوں کے ٹیٹرا پیک سے پوری ہوتی ہے تاہم ڈیری کی جانب سے فراہم کردہ دودھ کی قیمت میں غیر قانونی اضافے کے بعد ڈیری فارمرز اور ریٹیلرز کو یومیہ 9 کڑوڑ دس لاکھ روپے کا منافع ہورہا ہے یعنی کراچی کے شہریوں سے غیر قانونی اضافے کی مد میں ماہانہ 2 ارب 73 کڑوڑ روپے وصول کیے جارہے ہیں. ڈیری اینڈ کیٹل فارمرز ایسوسی ایشن پاکستان کے صدر شاکر عمر کے مطابق دودھ دینے والی بھینسوں کی بڑھتی ہوئی قیمت ،مہنگے چارے اور ٹرانسپورٹ سمیت دیگر اخراجات کی بنا پر موجودہ حالات میں دودھ کی قیمت میں اضافہ ناگزیر ہوگیا ہے.
دوسری جانب شہریوں کا کہنا ہے کہ موجودہ حالات میں دودھ کی قیمت میں اضافہ کراچی والوں پر کسی ظلم سے کم نہیں شہریوں نے مطالبہ کیا ہے کہ کمشنر کراچی زبانی جمع خرچ کے بجائے عملی طور پر اقدامات کرتے ہوئے مہنگا دودھ فروخت کرنے والوں کے خلاف کارروائی کریں.

100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں